ایم کیو ایم نے منشور پیش کردیا

0
88

ہاٹ لائن نیوز : ایم کیو ایم نے عام انتخابات کے لیے اپنا منشور پیش کر دیا۔

پریس کانفرنس کرتے ہوئے ایم کیو ایم کے کنوینر خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ پاکستان تب مضبوط ہوگا جب عام آدمی مضبوط ہوگا۔

ہمارے پاس مسائل کے حل کا آئینی نسخہ ہے، ہم نے آئین میں 3 ترامیم تجویز کی ہیں، بلدیاتی حکومت کے اختیارات بھی وفاق اور صوبوں کی طرح آئین میں درج ہونے چاہئیں۔

آئین میں کچھ تبدیلیاں کرنے کی ضرورت ہے، 50 سالوں میں آئین نے عوام کو اس طرح تحفظ نہیں دیا، ہم نامکمل اور بے اختیار جمہوریت نہیں چاہتے۔ ہم پاکستان کے 25 کروڑ عوام کو بااختیار بنانا چاہتے ہیں۔

متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے سینئر ڈپٹی کنوینر مصطفیٰ کمال نے اس موقع پر کہا کہ صوبے کے عوام 70 سال کے وزرائے اعلیٰ سے حساب مانگیں، سندھی وزیر اعلیٰ نے ہزاروں ارب روپے خرچ کئے۔

وفاقی حکومت نے سندھی وزیر اعلیٰ کو اربوں روپے دے دیے، اربوں روپے کے بجٹ کا حساب دینے کو کوئی تیار نہیں، ملک کا 56% بجٹ کہاں جاتا ہے پتہ نہیں؟

75 سالوں میں بلوچستان میں بلوچ اور سندھ میں سندھی وزیراعلیٰ بنے ہیں، 25 کروڑ عوام کو بااختیار بنانا چاہتے ہیں۔

ایم کیو ایم پاکستان کے سینئر رہنما فاروق ستار نے کہا کہ ایم کیو ایم کی قیادت متوسط ​​طبقے سے تعلق رکھتی ہے، 70 سال ہمیں ٹرک کی بتی کے پیچھے لگا دیا گیا۔

ان ترامیم کے بغیر ہمیں پاکستان آگے بڑھتا ہوا نظر نہیں آتا، ملک میں مہنگائی اور بے روزگاری آسمان کو چھو رہی ہے، ہم نے عام آدمی کے مسائل کو واضح کیا ہے۔

پاکستان کے ہر شہری کو جینے کا حق دیا جائے، محروم طبقات کو مساوی حقوق ملنے چاہئیں، پاکستان مقامی حکومتوں کے آئینی اختیارات کے بغیر نامکمل ہے۔

ایم کیو ایم بجلی، پانی اور گیس کے مسائل ختم کرے گی، چھوٹی صنعتیں لوکل گورنمنٹ کے تحت ہونی چاہئیں، 50 میگاواٹ تک کے پاور پراجیکٹس لوکل گورنمنٹ کو دینے کی اجازت دی جائے۔

ہمیں اپنی درآمدات کو کم کرنا ہے اور اپنی برآمدات کو بڑھانا ہے، دنیا میں آئی ٹی کی لاکھوں نوکریاں ہیں، ہمیں ڈگریاں دے کر نوجوانوں کو نوکری دینے والا نہیں بلکہ نوکری دینے والا بنانا ہے۔

ویڈرز کی آمدنی پر ٹیکس لگایا جائے نہ کہ زرعی آمدنی پر، تعلیم اور صحت کے لیے 10 سالہ ایمرجنسی لگائی جائے، جی ڈی پی کا 5 فیصد تعلیم اور صحت پر خرچ کیا جائے، جبری گمشدگیوں اور انسانی حقوق پر بھی توجہ دی جائے۔

Leave a reply