31

موڈیز نے نظر ثانی شدہ ریٹنگ میں پاکستان کی کریڈٹ ریٹنگ کو بی سے کم کرکے سی کردیا

اسلام آباد(ہاٹ لائن نیوز ) تفصیلات کے مطابق موڈیز نے پاکستان کیلیے نظرثانی شدہ ریٹنگ جاری کی ہے ۔ وزارت خزانہ کی جانب سے جاری کردہ اعلامیہ کے مطابق موڈیز کی جانب سے ریٹنگ ایکشن کا وزارت خزانہ نے سختی سے مقابلہ کیا ہے کیونکہ موڈیز کی جانب سے ریٹنگ ایکشن وزارت خزانہ اور اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی ٹیموں کے ساتھ پیشگی مشاورت اور ملاقاتوں کے بغیر یکطرفہ طور پر کیا گیا ہے۔وزارت خزانہ نے گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران موڈیز کی ٹیم کے ساتھ دو اجلاس کئے، جن میں ڈیٹا اور معلومات کا اشتراک کیا گیا جس میں واضح طور پر موڈیز کی ریٹنگ ایکشن سے متصادم صورت حال دکھائی دیتی ہے۔وزارت خزانہ معاشی اور مالی حالات کا باقاعدہ جائزہ لینے کے بعد،یہ بتانا چاہتی ہے کہ گزشتہ چند مہینوں میں حکومتی پالیسیوں سے مالیاتی استحکام لانے میں مددملی ہے۔ حکومت پاکستان کے پاس اپنی بیرونی ذمہ داریوں کو پورا کرنے کے لیے کافی لیکویڈیٹی اور فنانسنگ کے انتظامات ہیں۔پاکستان اس وقت آئی ایم ایف پروگرام کے تحت ہے، جس کا تسلسل ملک کی مالیاتی نظم و ضبط، قرضوں کی پائیداری اور اپنی تمام ملکی اور بیرونی ذمہ داریوں کو ادا کرنے کی صلاحیت کی تصدیق اور اعتماد پر مبنی ہے۔ ملک آئی ایم ایف پروگرام کے تحت طے پانے والے معاہدوں پر قائم ہے۔موڈیزکے پاس دستیاب معلومات میں خلا کی وجہ سے موڈیز کی قریبی اور درمیانی مدت کے معاشی نقطہ نظر میں خرابی صحیح صورتحال نہیں دکھاتی ہے اور اس کے تخمینے کا استعمال بنیادی اصولوں پر مبنی نہیں ہے ۔اس طرح سیلاب کی معاشی لاگت کا 30بلین امریکی ڈالر کا تخمینہ قبل از وقت ہے کیونکہ اعداد و شمار ابھی بھی ورلڈ بینک اور دیگر شراکت داروں کے تعاون سے مرتب کیے جا رہے ہیں تاکہ شفافیت اور درستگی کو یقینی بنایا جا سکے اور اعداد و شمار کی تصدیق کے بعد دستیاب ہو جائیں گے۔اس طرح، اس وقت جی ڈی پی کی شرح نمو پر پڑنے والے اثرات کا مکمل اور درست اندازہ نہیں لگایا جا سکتا اور اس لیے موڈیز کی جانب سے جی ڈی پی کی شرح نمو کی 0-1فیصد پر نظر ثانی کی کوئی ٹھوس بنیاد نہیں ہے۔ اسی طرح معاشی نقصانات کو مالیاتی خسارے میں تبدیل کرنے کا مقابلہ کیا جاتا ہے۔ اخراجات کے محاذ پر، اور وہ بھی کئی سالوں میں حکومت بڑے پیمانے پر عوامی بنیادی ڈھانچے کی تعمیر نو میں شامل ہو گی، فوری طور پر موجودہ اخراجات میں اضافے کو دوبارہ مختص کرنے اور بجٹ شدہ فنڈز کی دوبارہ تخصیص کے ذریعے پورا کیا جا رہا ہے اس طرح بڑھتے ہوئے خسارے کے خطرے کو کم کیا جا رہا ہے۔محصولات کے محاذ پر، برائے نام جی ڈی پی میں اضافے سے محصولات میں کسی بھی کمی کی تلافی کا امکان ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں