’’ شہباز شریف ’ ملزم ‘ نہیں بلکہ ’ مجرم ‘ ہیں ‘‘ پاکستانیوں کو بڑی حقیقت سے آگاہ کر دیا گیا

لاہور(ہاٹ لائن نیوز ) مشیر برائے احتساب شہزاد اکبر نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ شہباز شریف کی منی لانڈرنگ کیس کی مکمل تفتیش کے مطابق منی لانڈرنگ کیس کے سرغنہ اور مرکزی ملزم ہیں، جب تک میگا منی لانڈرنگ کیسز سے نمٹیں گے نہیں ایف اے ٹی ایف سے نہیں نکلیں گے۔

شہزاد اکبر نے دوران پریس کانفرنس بتایا کہ ہ منی لانڈرنگ کے دورانیے میں شہباز شریف پنجاب کے وزیراعلیٰ تھے، رمضان شوگر ملز نے ملازمین کے اکاؤنٹس کھلوائے، کیس کا چالان مکمل کرنے میں ایک سال کا عرصہ لگا، بینکنگ ٹرانزیکشنز کا شوگر کے کاروبار سے کوئی تعلق نہیں، اسحاق ڈار نے بے نامی اکاؤنٹس کھلوائے۔ رمضان شوگر ملز میں اورنگزیب بٹ کے اکاونٹ سے گلزار احمد کے اکاونٹ میں اربوں روپے بھیجے جاتے ہیں۔

گلزار احمد کے اکاونٹس سے مسرور انور پیسے نکلواتا ہے جبکہ گلزار احمد دو ہزار پندرہ میں فوت ہوتا ہے اسکا اکاونٹ دو ہزار سترہ اٹھارہ تک چلتا ہے، وفات کے بعد بھی گلزار احمد کے اکاونٹس سے مسرور انور پیسے نکلواتا رہتا ہے، مسرور انور کے نام پر بھی اکاونٹ اوپن ہوتا ہے جس میں سترہ کروڑ روپے آتا ہے جبکہ سولہ ارب روپے کریانہ مرچنٹ سکول ٹیچرز چکن سپلائیر سینٹری سٹور ڈینٹل سرجن کے نام کے اکاونٹس نے بھیجے، جب تفتیش کی گئی تو کسی بِھی شخص نے یہ پیسے نہیں بھیجے تھے .

یہ بے نامی اکونٹس منتقل کیے گے تھے، مشیر برائے احتساب نے مزید کہا کہ چینی کا کاروبار ہی کیوں نہ ہو، بے نامی اکاؤنٹ کھولنا جرم ہے، منی لانڈرنگ میں شہباز شریف بہت تربیت یافتہ ہیں، ایف آئی اے نے چالان مکمل کر کے جمع کرا دیا، خواہش ہے ان مقدمات کا جلد از جلد نتیجہ نکلے۔


Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (0) in /home/hotlinenews/public_html/wp-includes/functions.php on line 5107