47

پولیس اور عدلیہ کرپٹ ترین ادارے!!!! با اعتماد انٹرنیشنل ادارے کی تہلکہ خیز رپورٹ

اسلام آباد(ہاٹ لائن نیوز) ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل پاکستان کی جانب سے ملک میں کرپشن کا پیمانہ جانچنے کیلئے کرائے گئے نیشنل کرپشن پرسیپشن سروے (این سی پی ایس) 2دوہزار اکیس سے معلوم ہوا ہے کہ ملک میں پولیس اور عدلیہ کرپٹ ترین ادارے ہیں۔

نجی نیوز چینل اور بڑے اخبار سے وابسطہ سینئر صحافی انصار عباسی کے مطابق جاری کردہ سروے کے نتائج سے معلوم ہوتا ہے کہ عوام کی ایک بڑی اکثریت حکومت کی خود احتسابی کے معاملے پر مطمئن نہیں جبکہ سروے سے معلوم ہوا ہے کہ ملک میں کرپشن کی اہم ترین وجوہات کمزور احتساب اکیاون اعشاریہ دو فیصد)، طاقت ور لوگوں کی ہوس (انتیس اعشاریہ تین فیصد) اور کم تنخواہیں (اٹھارہ اعشاریہ آٹھ فیصد) بتائی گئی ہیں۔

سروے میں بتایا گیا ہے کہ ملک میں سب سے زیادہ کرپٹ ترین ادارہ پولیس ہے جس کے بعد عدلیہ کا دوسرا نمبر ہے۔ این سی پی ایس میں بتایا گیا ہے کہ ٹینڈر اور ٹھیکے دینے کا شعبہ تیسرا کرپٹ ترین شعبہ ہے جس کے بعد صحت، لینڈ ایڈمنسٹریشن، بلدیاتی حکومتیں، تعلیم، ٹیکسیشن اور این جی اوز کا سیکٹر آتا ہے۔

ٹرانس پیرنسی انٹرنیشنل پاکستان کی پریس ریلیز کے مطابق، گزشتہ بیس؍ سال کے دوران ادارے کی جانب سے پانچ مرتبہ (دو ہزار دو، دو ہزار چھ، دو ہزار نو، دو ہزار دس اور دو ہزار گیارہ) کرپشن کے متعلق یہی سروے کرایا جا چکا ہے۔ حالیہ سروے چودہ اکتوبر دو ہزار اکیس سے ستائیس اکتوبر دو ہزار اکیس تک ملک کے چاروں صوبوں میں کرایا گیا جس میں عام عوام نے گورننس سے جڑے اہم ترین معاملات پر اپنی رائے پیش کی ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں