23

پی ٹی آئی کے منحرف اراکین بارے بڑا فیصلہ کر لیا گیا

اسلام آباد(ہاٹ لائن ) اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کی زیر صدارت قومی اسمبلی کا اجلاس جاری ہے۔اپوزیشن نے پی ٹی آئی کے منحرف اراکین سے ووٹنگ نہ کرانے کا فیصلہ کیا ہے۔پی ٹی آئی منحرف اراکین سے ووٹ نہ لینے کا مقصد انہیں ممکنہ نااہلی سے بچانا ہے،اپوزیشن
اتحاد کے ووٹ ہی تحریک کی کامیابی کے لیے کافی ہوں گے۔آج متحدہ اپوزیشن کے پارلیمانی پارٹی کے اجلاس میں 176 ارکان موجود تھے۔ اپوزیشن کو ایم کیو ایم،بی اے پی کے ساتھ ق لیگ کے بھی دو ووٹ حاصل ہیں۔خیال رہے کہ گذشتہ روز قومی اسمبلی میں تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ کیلئے ہفتہ کو طلب کیا جانے والا اجلاس کا چھ نکاتی ایجنڈا جاری کیا گیا۔قومی اسمبلی سیکرٹریٹ سے جاری اعلامیے کے مطابق قومی اسمبلی کا اجلاس 9اپریل 2022 بروز ہفتہ صبح ساڑھے 10 بجے طلب کیا گیا ہے۔ چھ نکاتی ایجنڈے کے مطابق اجلاس کا آغاز تلاوت قرآن پاک سے ہو گا، پھر حدیث و نعت خوانی کے بعد قومی ترانہ بجایا جائے گا۔ اس کے بعد الگ سے سوالات شامل کیے جائیں گے جس کے بعد فہیم خان توجہ دلاؤ نوٹس پر کنٹونمنٹ بورڈ میں کونسلرز کو تنخواہوں کی عدم ادائیگی کا معاملہ اٹھائیں گے۔ایجنڈے میں چوتھا آئیٹم تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ کا ہے۔قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف میاں محمد شہباز شریف نے 28 مارچ 2022 کو درج ذیل قرارداد پیش کر کے ووٹنگ کی درخواست کی تھی، اس قرارداد کے مطابق، ’اس قرارداد کے ذریعے آئین کے آرٹیکل 95 کی شق (1) کے تحت اسلامی جمہوریہ پاکستان کا یہ ایوان قرار دیتا ہے کہ اسے وزیر اعظم عمران خان پر عدم اعتماد ہے اور اس کے نتیجے میں وہ شق (4) کے تحت عہدہ چھوڑ دیں۔ اس کے علاوہ پوئنٹ آف آرڈر کے علاوہ رول18 کے تحت معاملات اٹھائے جائیں گے جبکہ توجہ دلاؤ نوٹس میں پیٹرولیم مصنوعات کی بڑھتی ہوئی قیمتوں پر بات کی جائے گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں