گوگل نے روبوٹس کے لیے ‘آئین’ بنادیا

0
63

ہاٹ لائن نیوز : ٹیکنالوجی کی بڑی کمپنی گوگل نے روبوٹس کی وجہ سے ہونے والے نقصان کو محدود کرنے کے لیے روبوٹس کے لیے آئین بنا لیا۔

گوگل کو امید ہے کہ اس کا ڈیپ مائنڈ روبوٹکس ڈویژن ایک دن ایک مددگار روبوٹ بنانے کے قابل ہو جائے گا جو گھر کی صفائی یا کھانا پکانے جیسے احکامات پر عمل کر سکے گا۔ لیکن یہ تعاون خطرناک ہو سکتا ہے، یعنی روبوٹ کو یہ معلوم نہیں ہو سکتا کہ گھر گھر ہے صفائی اس طرح نہیں کرنی چاہیے کہ گھرکےمالک کو نقصان پہنچے۔

گوگل نے نئے سسٹمز کے ایک سیٹ کی نقاب کشائی کی ہے جس کے بارے میں کمپنی کا خیال ہے کہ روبوٹس کو بنانا آسان ہو جائے گا جو نقصان پہنچائے بغیرمدد کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ ان سسٹمز کا مقصد روبوٹس کو تیزی سے فیصلے کرنے اور اپنے اردگرد کو بہتر طور پر سمجھنے اور نیویگیٹ کرنے میں مدد کرنا ہے۔

اس پیش رفت میں AutoRT نامی ایک نیا سسٹم شامل ہے جو انسانی ارادوں کو سمجھنے کے لیے مصنوعی ذہانت کا استعمال کرتا ہے۔ یہ سسٹم لارج لینگویج ماڈل (LLM) کا استعمال کرتے ہوئے کام کرتا ہے۔

یہ نظام روبوٹ پر نصب کیمروں سے ڈیٹا لیتا ہے اور اسے ایک بصری زبان کے ماڈل (VLM) میں فیڈ کرتا ہے، جو ماحول اور اس میں موجود اشیاء کو سمجھ سکتا ہے اور اسے الفاظ میں بیان کرسکتا ہے۔ یہ ڈیٹا پھر LLM کو بھیجا جاتا ہے جو ان الفاظ کو سمجھتا ہے، ممکنہ کاموں کی فہرست بناتا ہے اور پھر فیصلہ کرتا ہے کہ کون سے کام انجام دینے چاہئیں۔

تاہم گوگل نے یہ بھی واضح کیا کہ ان روبوٹس کو اپنی روزمرہ کی زندگی کا حصہ بنانے کے لیے لوگوں کو یہ یقینی بنانا ہوگا کہ یہ روبوٹس محفوظ طریقے سے برتاؤ کریں گے۔ لہذا، گوگل نے آٹو آر ٹی میں فیصلہ سازی ایل ایل ایم میں روبوٹ آئین کو شامل کیا ہے۔

گوگل کے مطابق، یہ سیٹس حفاظتی بنیادوں پر یاد دہانیاں ہیں جن پر روبوٹ کاموں کا انتخاب کرتے وقت عمل کرتے ہیں۔

Leave a reply