پی ٹی آئی رہنماؤں کے گھر پر پولیس کے رات گئے چھاپے 42

پی ٹی آئی رہنماؤں کے گھر پر پولیس کے رات گئے چھاپے

پاکستان تحریک انصاف کے رہنماؤں کے گھر پولیس کی جانب سے رات کی تاریکی میں چھاپے مارے گئے ہیں جس دوران متعدد کارکنان کو گرفتار کرتے ہوئے انہیں نامعلوم مقام پر منتقل کردیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سابق وفاقی وزیر اور پی ٹی آئی رہنما حماد اظہر کے گھر پولیس کی بھاری نفری پہنچی تاہم وہ اس وقت وہاں موجود نہیں تھے۔

اس سے متعلق حماد اظہر نے ٹوئٹر پر ایک پیغام بھی جاری کرتے ہوئے حالات سے آگاہ کیا تھا۔

اسلام آباد میں رات کے اندھیرے میں پولیس نے پی ٹی آئی کے سینئر رہنما اسد عمر اور بابر اعوان کے گھر پر چھاپہ مارا گیا ہے۔

اسکے علاوہ عامر مسعود مغل سنئیر رہنماء پاکستان تحریک انصاف مرکزی ڈپٹی سیکرٹری اطلاعات کے گھر پولیس کا چھاپہ محلے کو چاروں اطراف سے گھیرے میں لے کے گرفتار کر لیا گیا۔

سابق وزیر اعلیٰ کمپلینٹ سیل ضلع وہاڑی کے چئیرمین ریاض قہم کو بھی گرفتار کرکے نامعلوم مقام پر منتقل کر دیا گیاہے۔

دوسری جانب جنرل سیکریٹری کراچی ڈویژن سابق ایم این اے سیف الرحمان کے گھر پر بھی پولیس نے چھاپہ مار کارروائی کرتے ہوئے گرفتار انہوں گرفتار کیا تاہم کراچی ایم پی اے اور پی ٹی آئی کراچی کے صدر بلال غفار کے گھر بھی پولیس کی بھاری نفری داخل ہوئی لیکن کوئی گرفتاری نہین کی جاسکی۔

بعدازاں سابق صوبائی وزیر قانون محمد بشارت راجہ کی رہائش دھمیال ہاؤس پر پولیس نے چھاپہ مارا جہاں ملازمین سے پوچھ گچھ راجہ بشارت گھر پر موجود نہ تھے۔

سیالکوٹ میں تحریک انصاف کے رہنما عظیم نوری گھمن اور سعید احمد بھلی کے گھر اور ڈیروں پر بھی چھاپہ مارا گیا جس دوران میاں اسلم اقبال کے بھائی میاں افضل کو گرفتار کیا گیا تاہم گجرات میں بھی رہنماؤں اور پارٹی کارکنان کے گھروں پر چھاپہ مارا گیا ۔

خوشاب میں بھی حقیقی آزادی مارچ روکنے کے لیے پولیس کی جانب سے مختلف چھاپے مارے گئے جس میں سابق ایم این ایز ملک احسان اللہ ٹوانہ اور عمر اسلم اعوان سمیت ضلعی صدر مسعود کنڈان سمیت متعدد کارکنان شامل فہرست رہے۔

پی ٹی آئی رہنما اور کارکنان کے گھروں پر چھاپے کے دوران پولیس کی جانب سے خواتین اور بچوں سے بدتمیزی کی گئی جبکہ سابق ناظم ملک غضنفر وڈھل سمیت پی ٹی آئی کے درجنوں کارکنان کو گرفتار کر لیا گیا۔

شیخوپورہ میں بھی تحریک انصاف کے متعدد کارکنوں کو گرفتار کر کے نامعلوم مقام پر منتقل کیا گیا۔

فیصل آباد میں پی ٹی آئی کے ایم این اے فیض اللہ کموکا کے گھر پر پولیس نے چھاپہ مارا تاہم فیض اللہ کموکا، بھائی کلیم اللہ کموکا پہلے ہی روپوش ہو چکے ہیں۔

وزیر آباد پولیس کا تحریک انصاف کے رہنما سابق ٹکٹ ہولڈر چوہدری شبیر اکرم چیمہ کے گھر پولیس نے چھاپہ مارا اور ملازم کو تشدد کا نشانہ بھی بنایا۔

چیئرمین پی ایچ اے یاسر گیلانی کے گھر پولیس نے دھاوا بولتے ہوئے گیٹ توڑنے کی بھرپور کوشش کی لیکن ناکام ہوئے ۔

پولیس کے سرگودھا، بھلوال، سلانوالی، ساہیوال، کوٹ مومن، بھیرہ میں بھی چھاپے مارے گئے جہاں سے گرفتار 15 سے زائد متحرک کارکنان کو نامعلوم مقام پر منتقل کردیا گیا ہے۔

ممبر پنجاب ایڈوائزری کمیٹی ضلعی صدر انصر اقبال ہرل، پی ٹی آئی رہنما مہر محسن، شیراکوٹ میں پی ٹی آئی رہنما سعید احمد خان، رائیونڈ مقامی رہنما چودھری کاشف اسماعیل، دیم اشرف سندھو اور اسلم کھوکھر اور رہنما فیضی جٹ کے گھروں اور ڈیروں پر بھی چھاپے مارے گئے ہیں۔

منڈی بہاوالدین میں بھی تحریک انصاف کے رہنماؤں اور پارٹی کارکنان کے گھروں پر چھاپے مارے گئے جہاں سے 21 کارکنان کو حراست میں لیا گیا۔

تحصیل بھلوال سے نائب صدر تحریک انصاف ساجد بٹ اور اسکے ساتھی کو گرفتار کیا گیا جبکہ تحصیل سلانوالی میں بھی 10 متحرک کارکنوں کو حراست میں لیتے ہوئے خفیہ مقام پر منتقل کردیا ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں