بچوں میں ٹائپ 1 ذیابیطس تیزی سے بڑھنے لگا

0
90

ہاٹ لائن نیوز : ماہرین صحت نے انکشاف کیا ہے کہ پاکستان میں تقریباً ایک لاکھ بچے ٹائپ ون ذیابیطس میں مبتلا ہیں، جنہیں صحت مند زندگی گزارنے کے لیے زندگی بھر انسولین کی ضرورت ہوگی۔

ہفتہ کو اسلام آباد میں میڈیا بریفنگ میں سینئر اینڈو کرائنولوجسٹ اور ماہرین صحت نے کہا کہ بدقسمتی سے والدین اور ڈاکٹروں میں معلومات کی کمی کی وجہ سے ذیابیطس میں مبتلا زیادہ تر بچوں کی بروقت تشخیص نہیں ہو پاتی۔

انہوں نے کہا کہ شدید بھوک کے شکار بچوں میں اچانک وزن میں کمی، بار بار پیشاب آنا اور موڈ میں تبدیلی ٹائپ 1 ذیابیطس کی علامات میں سے ہیں۔ اگر یہ علامات ظاہر ہوں تو والدین کو چاہیے کہ وہ اپنے بچوں کو قابل اور مستند ڈاکٹروں کے پاس لے جائیں اور ان سے شوگر چیک کرنے کے لیے کہیں۔

ماہرین کا کہنا تھا کہ پاکستان میں ذیابیطس ٹائپ ون میں مبتلا تقریباً ایک لاکھ بچوں میں سے بہت سے ایسے ہیں جن کی بروقت تشخیص نہیں ہوتی اور وہ بیماری کے ابتدائی دنوں میں ہی موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں۔

ذیابیطس کے ماہر اور بچوں میں ذیابیطس کی تبدیلی کے سربراہ پروفیسر عبدالباسط نے کہا کہ تنظیم کا مقصد ملک بھر میں ایسے 3000 بچوں تک پہنچانا ہے جن کے والدین انسولین نہیں خرید سکتے اور انہیں صحت مند زندگی کے لیے مفت انسولین فراہم کرنا ہے۔

Leave a reply