ایک ہی درخت کی جڑوں سےپھیلا ہواعجیب وغریب جنگل

0
57

لاہور: (ہاٹ لائن نیوز)اردن میں درختوں کی جڑوں سے پھیلا ہوا ایک عجیب سا چھوٹا جنگل ہے۔

“درخت کا جنگل” شمالی اردن کی وادی Irbid میں واقع ہے اور یہ ایک قدرتی سیاحتی مقام ہے جو سیاحوں کی توجہ کا ایک بڑا مرکز ہے۔

ہر کوئی جو فطرت کی خوبصورتی سے لطف اندوز ہوتے ہوئے ایک درخت کے تنے کے ساتھ ایک مکمل سبز جنگل دیکھنا چاہتا ہے یہاں آتا ہے۔

یہ شاندار تاریخی درخت تل حجیجہ اور راس العین کے علاقوں کے درمیان واقع ہے۔ ماہرین کے مطابق یہ 800 سال پرانا ہے۔ یہ ایک درخت دو دونم کے رقبے پر محیط ہے۔ درخت کی جڑیں ہیں جن سے شاخیں نکلتی ہیں، درختوں کی شکل میں جنگل بناتی ہیں۔

یہ درخت اس علاقے کے باسیوں کے لیے ایک تاریخی گواہ بھی سمجھا جاتا ہے۔ امریکی سیاح ڈاکٹر سائلہ میرل نے اسے ایک کانٹے دار جنگلی دیودار کا درخت قرار دیا۔ اس جگہ پر اس کی موجودگی نے اسے خاندانوں اور اسکول کے طلباء کے لیے ایک شاندار مقامی سیاحتی مقام بنا دیا ہے۔

ثقافتی ورثہ اور ماحولیاتی امور کے محقق ڈاکٹر احمد جبر الشرید نے کہا کہ الحجہ کے درخت کی اہمیت اس حقیقت میں مضمر ہے کہ یہ اردن کا سب سے بڑا طویل عمر والا درخت ہے۔ یہ ایک نایاب قسم کا درخت ہے۔

ڈاکٹر الشریدہ نے مزید کہا کہ اس درخت کی خطے میں ایک طویل تاریخ ہے اور شاید سب سے اہم بات یہ ہے کہ یہ خطے کے تاریخی اور زرعی سیاحتی مقامات میں سے ایک ہے اور یہ اپنی شکل اور جسامت میں منفرد ہے۔

الحاجیہ اور الشجرہ کے تاریخی علاقے کی ان تمام خصوصیات کے باوجود یہ سیاحتی نقشے سے ابھی تک غائب ہے۔ اسے بہت سی سہولیات کی ضرورت ہے جیسے ریسٹ ایریا، وزیٹر ایریا وغیرہ جو سیاحوں کے لیے اس کی افادیت کو بڑھا سکتے ہیں۔

Leave a reply